12

الیکشن کمیشن کا این اے 249 کراچی میں دوبارہ گنتی کا حکم

الیکشن کمیشن نے مفتاح اسماعیل کی درخواست منظور کر لی، ریٹرننگ افسر کو دوبارہ گنتی کا حکم دے دیا

اسلام آباد( 04 مئی ۔2021ء)الیکشن کمیشن آف پاکستان نے این اے 249  پر دوبارہ گنتی کی درخواست پر فیصلہ سنا دیا۔این اے 249 کراچی میں دوبارہ گنتی کی مفتاح اسماعیل کی درخواست منظور کر لی گئی ہے۔تفصیلات کے مطابق الیکشن کمیشن نے قومی اسملبی کے حلقہ این اے 249 کے ضمنی الیکشن میں دوبارہ گنتی کی مفتاح اسماعیل کی درخواست پر محفوظ کیا گیا فیصلہ سنا دیا ہے۔الیکشن کمیشن نے دوبارہ گنتی کی درخواست منظور کر لی ہے۔الیکشن کمیشن نے ریٹرننگ افسر کو دوبارہ گنتی کا حکم دیا ہے۔حلقے میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی 6مئی کو کی جائے گی۔درخواست میں کہا گیا تھابڑی تعداد میں پریذائیڈنگ افسران کی جانب سے فارم 45 پر دستخط نہیں کیے گئے تھے اوراین اے 249 کے 167 پولنگ اسٹیشنز کے فارم 45 پر دستخط موجود نہیں تھے نون لیگی وکیل نے کہا ہمارے پولنگ ایجنٹس کو فارم 46 بھی جاری نہیں کیے گئے۔180پو لنگ اسٹیشنز میں جو کارروائی ہوئی وہ قانون کے مطابق نہیں تھی. سلمان اکرم راجہ نے کہا تصدیق شدہ فارم 45 اور 46 نہ ہونے سے پورا الیکشن مشکوک ہوگیا نون لیگ کے وکیل نے کہا کہ الیکشن کمیشن خود چاہے تو دستیاب مواد پر دوبارہ پولنگ کا حکم دے سکتا ہے جس پرالیکشن کمیشن ممبر پنجاب الطاف قریشی نے کہا کہ بغیر کسی دراخوست دوبارہ پولنگ کا جائزہ نہیں لے سکتے جس حد تک کیس ہے وہاں تک ہی محدود رہیں گے. پیپلزپارٹی کے امیدوار قادر خان مندوخیل کے وکیل لطیف کھوسہ نے دلائل میں کہا کہ پولنگ کے دوران مسلم لیگ( ن) نے کسی فورم پر کوئی شکایت نہیں کی انہو نے کہا کہ صرف یہ کہنا کافی نہیں کہ بے ضابطگیاں ہوئی ہیں، نشاندہی کرنی ہوتی ہے کہ کہاں کیا بے ضابطگی ہوئی ہےلطیف کھوسہ نے کہا کہ ریٹرننگ افسر دوبارہ گنتی کی درخواست منظور کرنے کا پابند نہیں سربراہ پاک سرزمین پارٹی مصطفٰی کمال کے وکیل نے کہا کہ الیکشن کمیشن کیس کو پیپلزپارٹی اور نون لیگ تک محدود نہ رکھے. خیال رہے کہ ن لیگ کے امیدوار مفتاح اسماعیل ن کراچی کے قومی اسمبلی کے حلقے این اے 249 کے انتخابی نتائج کو چیلنج کیا تھا مفتاح اسماعیل نے حلقہ این اے 249 کے ریٹرننگ آفیسر کو تحریری طور پرریٹرننگ آفیسر کو 3 درخواستیں جمع کروائی گئی تھیںواضح رہے کہ قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 249 کے ضمنی انتخابات می پاکستان پیپلز پارٹی نے حکمران جماعت تحریک انصاف سے یہ نشست چھینی ہے سابق وفاقی وزیر فیصل واڈوا نےدوہری شہریت کیس میں نااہلی سے بچنے کے لیےقومی اسمبلی کی اس نشست سے مستعفی ہوکر سینٹ کے انتخابات میں حصہ لے کر سینیٹر منتخب ہوگئے تھے جس کے بعد یہ نشست خالی ہوگئی تھی.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں