15

فردوس عاشق اعوان کا اسسٹنٹ کمشنر کے معاملے پر رد عمل سامنے آ گیا

جعلی راجکماری کے نزدیک ان کے اباجی، چچا اور رانا ثناء اللہ کی بیورو کریٹس کو دھمکیاں حلال ہیں جبکہ اے سی کی دانستہ کوتاہی کی نشاندہی کرنا حرام ہے،۔چھاپہ مار کارروائیوں میں ناجائز منافع خوروں،ذخیرہ اندوزوں کی گرفتاریاں، جرمانے اور مقدمات کا اندراج کیا جا رہا ہے۔ معاون خصوصی کا جواب

لاہور ۔ 3 مئی 2021ء معاون خصوصی پنجاب فر دوس عاشق اعوان کا اسسٹنٹ کمشنر سیالکوٹ کے معاملے پر رد عمل سامنے آ گیا ہے۔انہوں نے اس معاملے پرمریم نواز کی تنقید کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ کرپٹ شاہی خاندان کی جعلی راجکماری کے نزدیک ان کے اباجی، چچا اوررانا ثناء اللہ کی بیورو کریٹس اور ان کی اولادوں کو دی گئی دھمکیاں حلال ہیں جبکہ اے سی کی دانستہ کوتاہی کی نشاندہی کرنا حرام ہے۔عوام جان چکے ہیں شاہی خاندان کے کرپٹ لٹیروں کا مقصد کرپشن بچانا ہے جبکہ ہمارا مقصد عوامی مفاد کا تحفظ کرنا ہےفردوس عاشق اعوان نے کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت مافیا کے خلاف جنگ جاری رکھے ہوئے ہیں۔کھوکھلے دعووں سے میڈیا کے سامنے شو بازیوں کے برعکس بزدار حکومت حقیقی عوامی خدمات کا سفر جاری رکھے ہوئے ہیں۔

چھاپہ مار کارروائیوں میں ناجائز منافع خوروں،ذخیرہ اندوزوں کی گرفتاریاں جرمانے اور مقدمات کا اندراج کیا جا رہا ہے۔واضح رہے کہ معاون خصوصی برائے اطلاعات پنجاب ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کی طرف سے رمضان بازار میں اسسٹنٹ کمشنر پر اظہارِ برہمی کے ‏واقعے پرمسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز کا سخت ردعمل آیا تھا، سابق وزیر اعظم نواز شریف کی صاحبزادی نے کہا کہ سرکاری افسران آپ کے ذاتی ملازم ‏نہیں ، رمضان بازاروں ميں غيرمعياری اور مہنگی اشياء حکومتی نالائقی کا ثبوت ہیں ، اپنی ناکامی اور بدترین کارکردگی کاغصہ سرکاری افسران پر ‏نکالنا فرعونیت ہے۔سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹر پر جاری کیے گئے اہنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ رمضان بازارميں خاتون اسسٹنٹ ‏کمشنر سے سلوک قابل مذمت ہے ، سول سرونٹس اور بیوروکریٹس پڑھ لکھ کر اس مقام تک پہنچتے ہیں ، ‏سول سرونٹس اوربیوروکریٹس سلیکٹ ہوکرنہیں آتے ، سرکاری افسران آپ کے ذاتی ملازم بھی نہیں ہیں ، وزیرہونے کا یہ مطلب نہیں کہ آپ کو افسران کی تذلیل کا لائسنس مل گیا یہ رعونت ‏قابل قبول نہیں ، سونیاصدف سے معافی مانگی جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں